مستحب غسل


مسئلہ ١٥٨: شریعت اسلام میں مستحب غسل بہت زیادہ ہیں جن میں سے بعض یہ ہیں۔
١.غسل جمعہ:اس کا وقت اذان صبح سے ظہر تک ہے اور بہتر یہ ہے کہ ظہر کے نزدیک بجا لاۓ ، اور اگر ظہر تک غسل نہ کرے تو بہتر یہ ہے کہ ادا و قضاء کی نیّت کے بغیر غروب جمعہ تک بجا لاۓ ، اور اگر جمعہ کے روز غسل نہ کر سکے تو مستحب ہے کہ شنبہ کی صبح سے غروب تک اس کی قضاء بجا لاۓ اور جس شخص کو یہ خوف ہو کہ جمعہ کے دن پانی نہیں ملے گا تو پنجشنبہ کے دن یا شب جمعہ میں غسل کرسکتا ہے۔

٢.ماہ رمضان المبارک کے غسل:رمضان المبارک کی پہلی، تیسری، پانچویں، ساتویں وغیرہ کا غسل لیکن اکیسویں شب سے مستحب ہے کہ ہر شب میں غسل کرے۔

٣.عید الفطر اور عید قربان کے دن کا غسل: عیدالفطر و عید قربان کے روز غسل انجام دینا مستحب ہے۔

٤.ذی الحجہ کی آٹھویں اور نویں تاریخ کا غسل۔

٥.عید غدیر و عید مباہلہ کے دن کا غسل۔

٦.ماہ رجب المرجب کے غسل: ماہ رجب المرجب کی پہلی، پندرہویں، ستائسویں اور آخری تاریخ کا غسل مستحب ہے۔
نوٹ:انکے علاوہ اور بھی بہت سے غسل ہیں جنکی تفصیل بڑی کتابوں میں ذکر کی گئ ہے۔